Why China Is Not Worried About Offending Muslim Allies


By: Rukiye Turdush 

Turkey’s Energy and Natural Resources Minister Berat Albayrak and China’s National Energy Administration Chairman Nur Bekri signed a nuclear energy agreement between the two countries, Beijing, September 2016.

The Chinese government released a New Silk Road project action plan in 2015 to facilitate the achievement of its global ambition. The project aimed to materialize China’s dream of expansion through Central Asia to Europe.

China colonized East Turkistan (which the Chinese government also calls the Xinjiang Uyghur Autonomous Region) in 1949. The region is located at the major gateway to this “New Silk Road” project and is mainly populated by Turkic-speaking ethnic Uyghurs and Kazakhs.

To promote the success of the “New Silk Road” project and make it easier to gain access to Muslim countries, China should respect the religious identity of Uyghurs and implement fair policy in the colonized land. Uyghurs and Kazakhs share the religion of the Central Asian nation, Turkey, Pakistan, Indonesia, Malaysia and many other countries that play integral roles in the project. However, China has harshly implemented a destruction policy in the region, locking up several million Muslims in so-called re-education camps that are no different from Nazi-style concentration camps.

According to eye witnesses and countless of media reports, belief in Islam, praying to God, eating halal food, practicing Islamic funeral ceremonies and refusing to marry Han Chinese have all been banned. Moreover, Chinese officials have called Islam a mental disease. The Han-centric nation-building manifestation of China has aggressively moved to abolish Islam in the region. This should offend all Islamic nations. Surprisingly, it does not offend them at all.

Why doesn’t China have to worry about offending its Muslim allies? The reasons could vary. For one, China has mastered its cheating and bullying strategy. For example, through economic war, China’s cheating has cost the United States alone two million jobs since it became a member of the World Trade Organization. In addition, the bullying of Taiwan and building of an artificial island in the South China Sea have manifested the Thick Black Theory (Hou Hei Xue) of China.

After getting away with all of this, China believed that it could also get away with offending its Muslim allies. Alternatively, it may have believed that such a risk was worth taking since East Turkistan has significant strategic importance to China.

The purpose of the “New Silk Road” or “One Belt, One Road” (OBOR) is to use China’s economic power and capital export as leverage to shape its main interest in geostrategic targets and to export the dominance of Han Chinese nationalism. China believes that it cannot fulfill these imperialistic goals without achieving total Han nationalist dominance in East Turkistan. Based on this belief, China has banned religion and Uyghur ethnic identity in East Turkistan to eliminate spaces that would allow the influence of other worlds.

Secondly, China has effectively manipulated the conflict between the West and Muslim countries, took the position of guardian over the Muslim countries in exchange for their silence regarding the issue. For example, the Turkish government was previously very supportive of East Turkistan. Back in 2009, President Erdogan criticized China and depicted the Urumqi massacre as a “genocide”. China demanded an official apology for that but never received one. In recent years, however, the adversary relationship between Turkey and the US has pushed Turkey further into the strategic circle of China. On numerous occasions, Turkish President Erdogan was quoted as saying, “Only atheist Satan can be silent in the face injustices”. Yet he now chooses to remain silent in the face of the tremendous injustices the Uyghurs are experiencing.

Furthermore, the financial crisis, the weakening of Western democratic ideology and rise of illiberal democracy in the West have given the green light to China’s genocidal policy against the Uyghurs. In fact, China tested the water before implementing the destruction of the religion and identity of Muslims in the region. Chinese state media produced vast amounts of propaganda material in several languages and circulated them around the world to further their agenda. They tried to illustrate that state oppression was a consequence of separatism and religious extremism or terrorism despite the fact that there was little evidence of organized terrorism, separatism or religious extremism.

Detainees listening to speeches in a re-education camp in Lop County, April, 2017
In 2014, China was successful at convincing Egypt to deport thousands of Uyghur students in exchange for a $40 billion trade deal. Furthermore, China arrested hundreds of ethnic Kazakhs in the region in the absence of any pending charges just to see the reaction of the Kazakh government. China also succeeded in getting the Turkish Foreign Affairs Minister, Cavus Ogli, to promise not to allow the Turkish media to publish items on Uyghur human rights. The reactions of these Muslim countries eased China’s worries that it would offend them. As a result, China enhanced its genocidal policy in the region.

China’s multistage and political strategy based on Sun Tzu’s “The Art of War” states: “befriend them to get their guard down, then attack their weakest point.” Chinese political strategies have never been based on transparency and honesty. If China is buying these Muslim countries trust to open their door for OBOR project and making them ignore religious and moral obligations, then soon, there will be a day that China can attack their weakest point.

“Rukiye Turdush is an independent human rights activist and writer based in Toronto.”


Millions of Khashoggi’s that the world doesn’t look for..


Did you found Khashaggi ?!
Millions of Khashoggi’s that the world doesn’t look for…

It is in everywhere around us in this world
On the land of, Yemen, Syria, Palestine, Turkestan, Burma, Kashmir, Egypt, Afghanistan, Libya, Bosnia, Iraq, Iran .. and more places

But the world has a one-eyed to see & move or investigation but only one Khashaggi,

Our Voice Matters
Twitter:  @OurVoiceMatterz 
Facebook: @ourvoicematterz
Website: https://write.ourvoicematter.com/

Egypt: Unprecedented crackdown on freedom of expression under al-Sisi turns Egypt into open-air prison


                                

The crackdown on freedom of expression under Egyptian President Abdelfattah al-Sisi has reached alarming new levels unparalleled in Egypt’s recent history, Amnesty International said today as it launched a campaign calling for the unconditional and immediate release of all those who have been detained solely for peacefully expressing their views.

The campaign, “Egypt, an Open-Air Prison for Critics”, is being launched in response to the unprecedented severity of the crackdown in Egypt, as people around the country increasingly express discontent with the economic and political situation. Amnesty International invites supporters from around the world to show solidarity with those risking their freedom to express their views by writing to the Egyptian government and calling for an end to the persecution.

“It is currently more dangerous to criticize the government in Egypt than at any time in the country’s recent history. Egyptians living under President al-Sisi are treated as criminals simply for peacefully expressing their opinions,” 

said Najia Bounaim, Amnesty International’s North Africa Campaigns Director.


“The security services have been ruthless in clamping down on any remaining political, social or even cultural independent spaces. These measures, more extreme than anything seen in former President Hosni Mubarak’s repressive 30-year rule, have turned Egypt into an open-air prison for critics.”


Since December 2017 Amnesty International has documented cases of at least 111 individuals who have been detained by the National Security Services solely for criticizing the President and the human rights situation in Egypt.

Hundreds of Egyptian political activists, journalists, human rights defenders, members of the opposition, artists and football fans are currently in jail for daring to speak up. The reasons for their arrests range from social media activity to having a history of activism. At least 35 individuals have been detained on charges of “unauthorized protest” and “joining a terrorist group” because they stood together in solidarity in a small peaceful protest against increased metro fares. Comics and satirists are among those who have been targeted, including at least two individuals who posted satirical commentary online and were arrested by the police under the pretext of “violating public decency” or other vaguely defined offenses.

The Egyptian authorities have recently passed new legislation that enables mass censorship of independent news platforms and pages belonging to human rights groups. Since April 2017, security agencies have blocked at least 504 websites without judicial authorization or oversight. The laws were adopted by the country’s parliament without any consultation with civil society or journalists, mainly under the pretext of “anti-terrorism” measures.

“President al-Sisi’s administration is punishing peaceful opposition and political activists with spurious counter-terrorism legislation and other vague laws that define any dissent as a criminal act,” said Najia Bounaim.

“The newly adopted media and cybercrime laws are further enforcing the Egyptian authorities’ near-total control over print, online and broadcast media.”

Amnesty International is calling on the Egyptian authorities to release all detainees who are in prison solely for peacefully expressing their opinions, end their repressive campaign of media censorship and abolish legislation that tightens the state’s stranglehold on freedom of expression in the country.

The Egyptian authorities’ relentless and unjustified measures to mute peaceful voices have pushed hundreds of activists and members of the opposition to leave the country to avoid being arbitrarily arrested. However Amnesty International has also highlighted the bravery of Egyptians who continue to speak up against injustice.

“Despite these unprecedented challenges to freedom of expression, and despite the fear which has become a part of daily life, many Egyptians continue to peacefully challenge these restrictions, risking their freedom in the process,” said Najia Bounaim.

“That’s why we are asking Amnesty International supporters around the world to voice their solidarity with all those detained in Egypt simply for peacefully expressing their opinions. We must show these brave individuals that they are not alone.”

Amnesty International is calling on supporters to sign its petition and write to the Egyptian authorities, calling on them to immediately and unconditionally release all those detained solely for peacefully expressing their opinions.

Click to see the source of the article 

54 patients died waiting for Israel to let them out of Gaza


54 patients died waiting for Israel to let them out of Gaza

Cancer patients take part in a December 2016 protest in Gaza City demanding that they be allowed to travel for treatment. In 2017, 54 patients died in Gaza after Israel denied or delayed such permits, the majority of them cancer patients. 

(Mohammed AsadAPA images).

Fifty-four Palestinians died last year waiting for Israeli permits to leave the Gaza Strip for medical treatment.
One of them was Faten Ahmed, a 26-year-old with a rare form of cancer. She died in August while awaiting an Israeli permit to travel for chemotherapy and radiotherapy not available in Gaza.
She had previously missed eight hospital appointments after Israeli “security approval” was delayed or denied, according to the World Health Organization.
Ahmed was one of five women who died from cancer in that month alone waiting for Israeli permission that never came.
Overall, 46 of those who died last year waiting for permits were cancer patients.

Shocking number of deaths

This staggering toll highlights the lethal impact of Israel’s ever-tightening siege on the two million people who live in Gaza.
“We’re seeing Israel increasingly deny or delay access to potentially life-saving cancer and other treatment outside Gaza, with shockingly high numbers of Palestinian patients subsequently dying, while Gaza’s healthcare system – subjected to half a century of occupation and a decade of blockade – is decreasingly able to meet the needs of its population,” Aimee Shalan, CEO of Medical Aid for Palestinians, said on Tuesday.
Her charity, along with Amnesty International, Human Rights Watch, Al Mezan Center for Human Rights and Physicians for Human Rights Israel, has issued an urgent call on Israel to “lift the unlawful sweeping restrictions on the freedom of movement of people from Gaza, most critically those with significant health problems.”
In 2017 Israeli occupation authorities approved just 54 percent of applications for permits to leave Gaza for medical appointments, the lowest rate since the World Health Organization began collecting data in 2008.
Israel has dramatically tightened the deadly squeeze; its approval rate for permits fell from 92 percent in 2012 to 82 percent in 2014 and then 62 percent in 2016, before hitting its lowest point last year.
The health and human rights groups note that the UN and the International Committee of the Red Cross have declared Israel’s land, sea and air blockade on Gaza, preventing the movement of its population, to be “collective punishment” – a war crime.
“Palestinians from Gaza missed at least 11,000 scheduled medical appointments in 2017 after Israeli authorities denied or failed to respond in time to applications for permits,” the groups state.

Egypt and Palestinian Authority complicit

The groups also note that Egypt and the Ramallah-based Palestinian Authority played a role in worsening the situation: “Egypt has kept the Rafah crossing mostly closed for the population in Gaza since 2013, which contributed to restricting access to health care.”
“As a state bordering a territory with a protracted humanitarian crisis, Egypt should facilitate humanitarian access for the population,” they state. “Nevertheless, ultimate responsibility remains with Israel, the occupying power.”
The Palestinian Authority also sharply reduced its financial approvals for medical treatment outside Gaza as part of its sanctions aimed at forcing Hamas to hand over control of the governance of Gaza.
These PA restrictions resulted in at least one death, according to the groups. But medical authorities in Gaza have said that more than a dozen people, including a 3-year-old girl with a heart condition, died waiting for payment approval from Ramallah.
All of this comes amid the protracted siege-induced crisis which has brought the collapse of key parts of the health system.
“Amid widespread poverty and unemployment, at least 10 percent of young children are stunted by chronic malnutrition, up to half of all medicines and medical items in Gaza are completely depleted or below one month’s supply, and chronic electricity shortages have caused officials to cut health and other essential services,” the human rights and medical groups state.

End the siege

Earlier this month, hospitals in Gaza began shutting down as emergency generators ran out of fuel, forcing the postponement of hundreds of operations.
On Wednesday, RT posted this report from Gaza about the plight of cancer patients. Correspondent Anya Parampil spoke to Zakia Tafish whose husband Jamil died after he was repeatedly blocked from traveling to Jerusalem for surgery.

The channel also aired a report about the worsening situation in the territory’s hospitals.
Following UN warnings of looming catastrophe, Qatar and the United Arab Emirates last week pledged $11 million in short-term funding to stave off an even worse catastrophe for another few months.
However, as the human rights groups note, there is no long-term solution but to end the siege.
“The Israeli government’s restrictions on movement are directly connected to patient deaths and compounded suffering as ill patients seek permits,” Al Mezan director Issam Younis said.
“These practices form part of the closure and permit regime that prevents patients from a life of dignity, and violates the right to life.”
The UK-based Medical Aid for Palestinians is calling on the public to contact lawmakers in the British parliament and “ask them to urge the UK government to take action and save lives in Gaza.”

Is China Embellishing its economy through despotism?


The Land of Dragon, propaganda and ulterior motives i.e. China has always been a part of discussions among countries across the globe. Some of these nations are rapidly becoming its ‘economical’ partners and few of them like USA, India,Japan and nowadays Australia (after knowing that Beijing is trying to influence their politicians) are speaking against it. The others are still deciding, Policies of Trump has shook their faith in USA but they do not trust Xi Jinping either. Speculations are rife that China is on the verge of becoming a Global force able to change the world order. Though, is this road made by supporting Dictorians and using the blood of innocents? To know the answer, we first need to peek inside China itself. Let’s start with its Achilles’ heel, East Turkestan.


There is a famous Chinese proverb, A diamond with a flaw is worth more than a pebble without imperfections. East Turkestan is just that for PRC,an Imperfect Diamond. It was occupied by them in October 1949.This realm is home to Millions of Uyghurs who are a Turkic ethnic group. Alas, its name was changed to Xinjiang, means new territory. Uyghurs never liked the communist regime and after their nation’s accession. There was nothing common between both the regions. From Turkish traditions to their belief in Quran. From the songs they sung to the pictures they painted. From their food to the clothes they wore. Even their Names, language and games were different from that of Chinese. One can understand these disparities by a single fact that Uyghurs have a religion while China believes in atheism.
 

The above Dissimilarities were always dealt in a harsh manner. The PRC put unthinkable restrictions on Uyghur community. No one was allowed to practice Islam or study Quran. Their farmlands and ancestral homes were being snatched away. The influential leaders, nationalist scholars and artists were all being hanged to death. People even came out on streets to save East Turkestan but they were butchered by military. Basically, anyone who uttered a single word against China was behind the bar. Then came the cultural revolution by Mao, only the mention of this incident and one can recall all the horrors of that time. During this incident too, Uyghurs remained the main targets of Maoists. In spite of being poles apart and its unlikeliness for the people, China occupied East Turkestan.


Till this day, Uyghurs are suffering in the hands of communist regime as it desperately tries to hold on this territory but Why????


At present, East Turkestan is the largest Chinese occupied division and the eighth largest country subdivision in the world, spanning over 1.6 million km2.. Not only this,the most well-known route of the historical Silk Road ran through the territory from the east to its northwestern border. In recent decades, abundant oil and mineral reserves have been found here, and it is the largest natural gas-producing region for Beijing. Traditionally an agricultural region, East Turkestan also has large deposits of minerals and oil including abundant reserves of coal, crude oil, and natural gas. 

Ripping off the Uyghur land of its resources,the oil and gas extraction industry in Aksu and Karamay is booming, with the West–East Gas Pipeline connecting to Shanghai. Over a fifth of China’s coal, natural gas and oil resources came due to the invasion of East Turkestan. And today it plays a vital role in Xi Jinping’s ‘One Belt One Road’ initiative. He is leaving no stone unturned to exploit Uyghurs and suppress their voice of freedom.


Though it is not only the people of East Turkestan who are being punished for their natural wealth. If we take a look at the countries who think China as their ally, we will find that those Governments are themselves wolves in sheep’s clothing. A large number of investments made by Beijing have been in conflicted zones with an authoritarian Government. Countries like Maldives,Philippines, Cambodia, parts of Africa, Myanmar, Saudi Arabia, Egypt etc. have one thing in common and that is lack of freedom. The common people in these countries are already suffering and by filling the pockets of corrupt politicians, China is making sure that the situation remains the same.


This attitude of a wannabe super power is due to one reason, Economy. China wants to increase and expand its economy by Hook or crook.”


The economic interests of Beijing has always overshadowed the Humanitarian issues all over the world and recent Rohingya crisis is a testimony to this fact. China’s reaction to it has uncovered its true intentions. Millions of Rohingyas were left without homes, many died and children were orphaned but PRCsupported the Myanmar Government. All of this because of a pipeline which will let Beijing acquire 200,000 barrels of crude a day. It is no coincidence that the areas of the pipeline passing through Myanmar’sRakhine states includes ethnic cleansing ofthe Rohingya. 
 

Same is the case in other countries. Beijing’s giant state corporations have invested billions of dollars in dams, oilfields and mines to dominate theCambodian investment landscape. In Maldives, it has given Huge loans to the corrupt PPM Government and investing in infrastructure projects like Hulhumale Housing schemes, bridges etc. It has influenced the Philippine President Rodrigo Roa Duterte so well that he is supporting Xi Jinpingin claiming most of the South China Sea. China has also set up funds with the UAE and Qatar worth a total $20 billion to invest in conventional energy. It extended its contracts to buy oil and half of Beijing’s oil imports originate from the Middle East. The Governments of these countries are either too weak or draconian in nature.


According to Xi Jinping or any Dragon leader it isn’t worth one’s while if millions of people are dying or living in horrible condition. They will keep ignoring Rohingya Genocide, imprisonment of Human Rights activists and journalists, murders of politicians, bloggers being flogged 100 times or Millions forced to step on Land Mines until they hinder China’s growth. They will keep flourishing an economy on the cost of Human lives and pave its way amid corpses. Its been more than 60 years since Uyghurs are suffering and now the Dragon is trapping other countries too.


According to Mao Zedong, Political power grew out of the barrel of the gun. Following his leader, Xi Jinping is growing Economic power too from that same barrel of gun.


Originally posted on Turkistan Times

Why China’s Ganging up against Uyghur Muslims is a threat for the world?


By: Gulnaz Uighur
Follow at: @iamgul8
There are chances that you have not heard about Uyghurs or about our connection with China. So before writing about the threat, here is an introduction to our community. Uyghurs are ethnically Turkic people living in the areas of Central Asia. We practice a moderate form of Islam and our land is called East Turkestan. Though, in 1949 China occupied it and named it as Xinjiang( means new territory). Since then we Uyghurs have been subjected to unspeakable atrocities by the communist regime. Our land is rich in natural resources which became the reason behind its occupation. Our culture and values are entirely different from Chinese ideology. Due to this, we have been imprisoned in our own homes.

The Heights of oppression in China

Uyghurs are not allowed to Practice Islam. Thousands of mosques have been destroyed in the name of development. There have been notices to praise Xi Jinping before Allah, these posters are pasted in every corner of Xinjiang (read East Turkestan). We are not allowed to fast during the month of Ramadan. Beards are banned for Uyghur men. Children below 18 yrs are not allowed to visit pray,visit mosques or learn Islam. If a parent is caught teaching Quran to their kids, they get punished. 

Regular raids are conducted in Uyghur houses without even a warrant. Our language is not taught in schools, there are no job vacancies for us. Child labor is prevalent (I myself have been a victim). Uyghurs are not allowed to leave China, our passports are kept with the authorities. So if someone wants to go abroad, then we first need to visit the police station. Therefore our trip to abroad can easily end in torture,humiliation or imprisonment( authorities in China don’t need a reason to arrest Uyghurs). There are many such things happening with us right now. While you take a sound sleep at your well equipped apartments, our homes are searched and our beloveds, taken away. Most of the time we never hear about their fate, whether they live or die. We never know! 

On top of it all, if some of us escaped or got lucky to legally leave the country. Some Uyghurs who travel for education or are living in asylum are somehow trying to get their life together. But Xi Jinping is not able to see that either, according to him domination is the key to prosperity. 

From Economy to Expansion

Under Xi Jinping’s regime, the Uyghur conflict has been set on fire. China is now Ganging up with other countries against Uyghurs. The recent example is of Turkey’s declaration of blocking Anti-China media came just after signing security deals with the country. Turkey has been a major supporter of Uyghurs and this is a major setback. Although, its not the first time that Xi Jinpinghas used economic ties to restrict the freedom of our community. Recently, Egypt also detained dozens of Uyghur students and arrested hundreds of Uyghurs on the behest of China. This happened despite all of them living legally in Egypt.(Here is a petition for you to support). 
But how the suppression of Uyghurs is a threat for the world? 

If one closely studies the reason and pattern of persecution by China, then one can easily distinguish its motive of using economic tools as a compliment to its expansion policies. By looking at the examples of Turkey, Egypt, Thailand, Pakistan and even Italy( recently Dolkun Isawas not allowed to speak at a conference in Italian senate and was detained instead) etc. We find that just after signing some deals , China was able to dictate their policies about Uyghurs. Earlier these countries didn’t have a problem with us but suddenly they find it difficult to protect Human Rights. There are Uyghurs who were living from past 10 years but today they are forced to flea and live in fear. 

The world knows that Human rights have no place in China itself. And if China continues to strengthen its ties with other countries through projects economic projects. Then soon the human rights situation will become horrible even for the native citizens of those countries. China has always been aggressive about its recession policies and will do anything to expand. The wounds of cultural genocide are still fresh in everyone’s mind. The results of steel revolution by Mao have been horrible too. 

Therefore, the world must learn from the Uyghurs despotism and stop China from throttling the Human rights of Uyghurs. Or it won’t take long for Xi Jinping to choke the necks of those who support him now. 

مرسی کی مٹھی میں مصر،مقید یا محفوظ؟ سید منصور آغا


مصر سے ایک مرتبہ پھرشورو شر اور مظاہروں کی خبریں آرہی ہیں۔اس کا سرا ایک بیرونی سازش سے جڑا نظرآتا ہے۔ 26؍ نومبر کی ایک رپورٹ کے مطابق، جس کی ابھی تک تردید نہیں ہوئی ہے، 4؍نومبر کو رام ا
للہ میں مصر کے سابق سفارتکار، وزیر خارجہ اور عرب لیگ کے سابق جنرل سیکریٹری عمروموسیٰ اور اسرائیل کی سابق وزیر خارجہ تسپی لیفنی(Tzipi Livni) کے درمیان ایک خفیہ ملاقات ہوئی تھی جس کی تفصیل روزنامہ’’القدس العربی‘‘ کے مدیرعبدالباری العطوان نے ایک برطانوی سیٹلائٹ ٹی وی چینل کو ایک انٹرویو میں بتائی ہے۔ محترمہ لیفنی ان دنوں سیاسی خلا میں بھٹک رہی تھیں اور 3؍ دسمبر کو ہی سیاست میں واپس آنے اور آئندہ چنائو لڑنے کا اعلان کیا ہے۔ اسی طرح جناب مرسی بھی مصر میں اپنی سیاسی جڑ مضبوط کرنے کی جدوجہد کررہے ہیں۔ مسٹر عطوان کے مطابق لیفنی نے مسٹر موسیٰ سے سیدھے سیدھے کہا کہ غزہ پر اسرائیلی حملے کی کامیابی کے لیے وہ صدر محمد مرسی کو داخلی معاملات میں اس قدر مصروف کردیں کہ وہ اسرائیلی کاروائی میں مداخلت نہ کرسکیں۔ چنانچہ واپس آتے ہی عمروموسیٰ نے صدرمرسی اور ان کی پارٹی کے خلاف عوامی حملے تیز کردیے۔ دوسرامورچہ آئین ساز اسمبلی میں کھولاگیا، جس کے وہ ایک رکن تھے۔ انہوں نے ایک ایسی شق پر بحث کی راہ مسددود کردی جو خود ان کی پیش کی ہوئی تھی۔ ساتھ ہی حزب اختلاف کے گروپوں کو اسمبلی کے بائیکاٹ پر اکسایا تاکہ آئین سازی کا عمل بحران کا شکار ہوجائے اور اسمبلی اپنی مقررہ مدت (30نومبر )تک اس کو منظور نہ کرسکے۔ چنانچہ یکے بعد دیگرے متعدد چھوٹے گروپوں نے عمروموسیٰ کے اکسانے پر کونسل کی رکنیت سے خود کوہٹالینے کا اعلان کردیا۔مسڑموسیٰ صدارتی الیکشن میں محمد مرسی کے قریب ترین حریف تھے اور اس تگ و دو میں ہیں کہ کسی طرح اقتدار ان کے زیر اثرآجائے۔
ان کا یہ سیاسی اقدام اس اعتبار سے بڑا سنگین تھا کہ کونسل کی مدت ختم ہونے والی تھی اور آئین سازی کا کام تقریباً سات آٹھ فیصد باقی تھا۔ اگرچہ صدر مرسی نے ایک صدارتی حکم جاری کرکے کونسل کی مدت میںدوماہ کی توسیع کردی، لیکن یہ اشارے مل رہے تھے کہ جس طرح ملک کی اعلیٰ ترین عدالت ’سپریم آئینی بنچ‘ نے، مصر کی پہلی منتخب پارلیمنٹ کے ایوان زیریں کے انتخاب کوصدر مرسی کی حلف برداری سے عین قبل محض تکنیکی بنیاد پرغیر قانونی قرار دے دیا تھا، جس کے بعد فوجی کمان کونسل نے آناً فاناً اس کو تحلیل کرنے کا فرمان جاری کردیا تھا،اسی طرح آئین ساز کونسل اورایوان بالا کو بھی کالعدم کیا جاسکتا ہے۔ یہ بات قابل ذکر ہے اس مقصد کی کئی عرضیاں مذکورہ بنچ میں زیر سماعت ہیں جس کے اکثر جج صاحبان کی تقرری معزول ڈکٹیٹر صدر حسنی مبارک کے دور میں ہوئی تھی۔ ظاہر ہے انہوں نے ایسے ہی افراد کا تقرر کیا ہوگا جن کا رجحان مذہب سے دوری کا ہو۔ یہ بات بھی قابل ذکر ہے کہ صدر مرسی کو اقتدار منتقل کرنے سے پہلے سپریم فوجی کمان کونسل نے، جس کو حسنی مبارک سے اقتدار منتقل ہوا تھا، ایک فرمان جاری کرکے آئین کی توثیق کا اختیارخود اپنے ہاتھ میں لے لیا تھا۔یہ سب تدبیریں اس لیے تھیں کہ اگرچہ لامذہب گروپ اقلیت میں ہے مگر آئین ان کی پسند کا ہی ہو۔ صدر مرسی نے زہرکے یہ دونوں گھونٹ اس وقت تو خاموشی سے پی لیے، مگر12اگست 2012ء کو 77 سالہ وزیر دفاع اور سپریم فوجی کمان کونسل کے چیئرمین فیلڈ مارشل احمد سمیع طنطاوی اور ان کے معتمد خاص چیف آف آرمی اسٹاف جنرل سمیع عنان کو ریٹائر کرکے فوج پر اپنی گرفت مضبوط کرلی۔11فروری 2011ء کو صدر حسنی مبارک کے زوال کے بعد سے طنطاوی ہی فوجی کمان کونسل کے ذریعہ ملک پر حکومت کررہے تھے۔ مگر عدلیہ میں ابھی ان جج صاحبان کا دبدبہ ہے جوسابق نظام کے پسندیدہ تھے۔ سمجھا جاتا ہے ان کی ہمدردیاں مصر کے نئے رجحان اور نومنتخب صدر سے زیادہ مخالف نظریے سے وابستہ ہیں۔
مسٹر موسیٰ کی مہم کے زیراثر چند ارکان کی علیحدگی کے باوجود ایک سو رکنی آئین ساز کونسل کے ممبران کی تعداد ازروئے قانون آئین کی منظوری کے لیے مطلوب دوتہائی یعنی67 سے کم نہیں ہوئی۔ چنانچہ حتمی رائے شماری کے موقع پر 85ارکان موجود تھے، حالانکہ خبریں یہ تھیں کہ تقریباً 30 ممبران خود کو الگ کرچکے ہیں۔ اسرائیل اور عمرو موسٰی کے درمیان اس سازبار کی تصدیق مشرق وسطٰی کے معاملات کے ایک اسرائیلی ماہر بنہار عنبری نے بھی کی ہے۔ انہوں نے روسی ٹی وی چینل ’’رشیا ٹودے‘‘ کو ایک ملاقات کے دوران بتایا کہ مصری صدر مرسی نے اسرائیلی حملے کو شروع ہونے سے پہلے ہی نامراد کردیا۔ انہوںنے اہم بات یہ کہی کہ ’’اسرائیل نے کچھ داخلی طاقتوں پر انحصار کیا تھا کہ وہ مسڑی مرسی کو اندرون ملک سیاسی و اقتصادی معاملات میں الجھائے رکھیں گے‘‘۔ مگر ایسا نہیں ہوسکا اور صدر مرسی کے دبائو میں اسرائیل کو19نومبر کو اپنے حملے روک دینے پر آمادہ ہونا پڑا جس پر امریکا سمیت کئی ممالک نے صدر مرسی کو داد و تحسین سے نوازا۔ مشرق وسطیٰ کی تاریخ میں یہ پہلا موقع ہے جب اسرائیل کو ایسی پسپائی اختیارکرنی پڑی۔ اس سے ضمناً ایک نکتہ یہ صاف ہوتا ہے کہ اہل فلسطین پر اسرائیل ماضی میں مظالم اس لیے جاری رکھ سکا کہ مصر کے سابق حکمرانوں کی اس کو تائید حاصل تھی، ورنہ کوئی وجہ نہیں کہ صدر مرسی اسرائیل کے حملے رکوا سکتے ہیں مگر انور سادات اور حسنی مبارک نہیں رکوا سکے۔اسرائیل اگرچہ حالیہ امریکی صدارتی الیکشن میں صدر اوباما کو وہائٹ ہائوس سے باہر کا راستہ دکھانے میںکامیاب نہیں ہوسکا مگر اس کو یہ امید ضرور ہے وہ صدرمرسی کو منصب چھوڑنے پر مجبور کاسکے گا تاکہ مصر میں کوئی ایسا شخص پھر برسر اقتدار آجائے جو فلسطینیوں اور عربوں کے مفادات کے بجائے اسرائیلی مفادات کا نگراں ہو۔
اس جنگ بندی کے اگلے ہی دن،20نومبر کو صدر مرسی نے ایک غیر معمولی فرمان جاری کرکے (عارضی طور) پر عدلیہ پر یہ پابندی لگادی کہ نہ تو کسی صدارتی فرمان کو کالعدم کیا جائے گا نہ آئین ساز کونسل کو چھیڑا جائے گا۔ جس پر یہ اندیشہ ظاہر کیا گیا وہ بھی سابق صدور کی طرح ملک کے آمر بن جانا چاہتے ہیں۔ چنانچہ احتجاجوں کا سلسلہ شروع ہوگیا، جو ہنوز جاری ہے۔لیکن مرسی نے عدالت عالیہ کے ججوں سے ملاقات کے دوران اور قوم سے ٹی وی پر خطاب میں یہ اطمینان دلایا ہے کہ یہ اقدام عارضی ہے اور اس کامقصد صرف اتنا ہے کہ آئین سازی اورعوام کے منتخب نمائندوں کو اقتدار کی مکمل منتقلی میں کوئی رکاوٹ پیدا نہ ہو۔
ایک اندیشہ یہ بھی تھا کہ اگر اس صدارتی حکم کے باوجود عدالت عالیہ نے آئین ساز کونسل کو کالعدم کردیا یا اس کی مدت میں صدارتی حکم سے کی گئی توسیع کو مسترد کردیا تو ایک نیا بحران کھڑا ہوجائے گا۔ چنانچہ آئین ساز کونسل نے ایک طویل اجلاس کیا جو جمعرات (29نومبر ) کو رات بھر چلتا رہا اور جمعہ 30؍نومبر کو اپنی مدت ختم ہونے سے پہلے آئین کی تمام 234دفعات کو فائنل منظوری دے دی۔ اس پر اپوزیشن کا اعتراض یہ ہے کہ آئین میں ملک کی مشترکہ سوچ کے بجائے صرف ایک ہی غالب رجحان کا عکس ملتا ہے اور کیونکہ اس پر ووٹنگ میں عیسائی اوراجتماعی امور میں مذہب کے عمل دخل کے مخالف ممبران نے حصہ نہیں لیا،اس لیے اس منظوری کا اعتبار ختم ہوگیا۔ انہوں نے یہ دلیل غالباً ہندستان کی بڑی اپوزیشن پارٹی بھاجپا سے لی ہے جو یہ اصرار کرتی ہے کہ ہرسرکاری فیصلہ اس کی رائے اور ترجیح کے مطابق لیا جائے،ورنہ وہ پارلیمنٹ نہیں چلنے دے گی۔
آئین ساز کونسل کی اس مستعدی پر اگرچہ مخالف سیاستداںاورچند صحافی جلد بازی کا الزام عاید کررہے ہیں مگر اس پر قانونی سوال نہیں اٹھایا جاسکتا۔یہ جمہوریت کی جڑیں جمانے کا ایک قدم ہے۔ اس منظوری سے سپریم آئینی عدالت کے محترم جج صاحبان بھی ششدر رہ گئے، جو ہفتہ کے دن آئین ساز کونسل کے قانونی جواز پر زیر غور عذرداریوں پر اپنا فیصلہ صادر کرنے والے تھے۔ اسی دوران صدر مرسی نے سابق دور سے چلے آرہے اٹارنی جنرل عبدالمجید محمود کو ان کے منصب سے ہٹا دیا اور ان کی جگہ طلعت عبداللہ کو حلف دلادیا۔ اگرچہ مسٹر محمود کو وٹیکن میںملک کا سفیر مقرر کیا گیا ہے مگر انہوں نے اپنے ہٹائے جانے پر احتجاج کیا اور نئی ذمہ داری نہیںسنبھالی ہے۔
ہفتہ یکم دسمبر کو سپریم آئینی عدالت کے باہر صدر مرسی کے حامیوں نے مظاہرہ کیا۔ اگرچہ وزارت داخلہ کی طرف سے ججوںکو تحفظ فراہم کرنے کا یقین دلایا گیا تھا مگر انہوں نے ’’ ذہنی اور جسمانی دبائو ‘‘ پر احتجاج کرتے ہوئے عدالت کا بائکاٹ شروع کردیا۔ اس روز( ہفتہ کو) ہی صدر مرسی نے ایک فرمان جاری کرکے آئین پر ریفرنڈم کے لیے 15؍دسمبر کی تاریخ مقرر کردی ہے۔ ریفرنڈم کے لیے ضابطہ کے مطابق عدلیہ کی نگرانی مطلوب ہے، مگر اندیشہ یہ تھا موجودہ حالات میں ججوں نے اس سے انکارکیا تو ایک نیا مسئلہ کھڑا ہوگا۔ مگر پیر3؍دسمبر کی شام ہوتے ہوتے ’’سپریم جوڈیشیل کونسل‘‘ نے ججوں کے ہڑتال پر رہنے کے عزم کے باوجود ریفرنڈم کی نگرانی سے اتفاق کرلیا ہے۔ اس کا مطلب یہ ہے کہ صدارتی فرمان کے مطابق آئین پر 15؍دسمبر کو ریفرنڈم ہوگا۔ ملک میں موجودہ سیاسی رجحان سے اندازہ یہ ہے کہ اگر عالم مایوسی میں اپوزیشن گروپ ریفرنڈم کو ناکام کرنے کے لیے لاقانونیت پر نہیں اترآئے تو آئین کو بھاری اکثریت سے مطلوبہ عوامی منظوری مل جائے گی، جس کے نوے دن کے اندر تحلیل شدہ ایوان کا انتخاب عمل میں آئے گا اور ملک کا انتظامیہ پوری طرح سول کنٹرول میں آجائے گا۔ لیکن یہ سب اسی صورت میںممکن ہوگا جب ہنگاموں کا دور رک جائے۔ درایں اثنا مرسی حامیوں نے بجز ایک دو مظاہروں کے سڑکوں پر اترنے سے گریز کیا ہے تاکہ ٹکرائو کی صورت پیدا نہ ہو اور ملک میںخون خرابہ کا نیا دور شروع نہ ہوجائے۔ اس لیے اس وقت صرف وہی مظاہرے نظر آرہے ہیں جو اپوزیشن کی طرف سے ہورہے ہیں، مگر اس کا مطلب یہ نہیں مرسی کے موقف کی عوامی حمایت مفقود ہوگئی ہے۔
آئین کے مسودے میں اقلیتوں کو مکمل تحفظ فراہم کیا گیا ہے۔ سابق آئین میں مصر کو عرب دنیا کا ایک حصہ کہا گیا تھا، موجودہ میں عرب اور مسلم دینا کا حصہ کہا گیا ہے۔ سابق کی دفعہ 2کے مطابق’’ریاست کا مذہب اسلام اور زبان عربی ہے۔ شریعت کے اصول قانون سازی کی اصل ماخذ ہیں۔ ‘‘ نئے آئین میں اس دفعہ کو جوں کا توںرکھا گیا ہے۔البتہ دفعہ 219میں وضاحت کی گئی ہے کہ شریعت کے اصولوں سے مرادکیا ہے؟ ساتھ ہی کہا گیا ہے کہ سنی اسلام کے چاروں مذاہب سے رہنمائی حاصل کی جائے گی۔ سابق آئین میں مذہبی اقلیتوںکا کوئی ذکر نہیں، جبکہ نئے مسودے میں کہا گیا ہے عیسائی اور یہودی فرقوں کے لیے قانون سازی کا اصول ملک میں ان کی حیثیت اور مذہب کے مطابق ہوگا۔موحد اقلیت کو اپنی عبادت گاہیں بنانے چلانے کا حق اور اپنے مذہبی امورمیں آزادی ہوگی۔ تمام مذاہب کے انبیا اور رسل نیز اہم شخصیات کی توہین کو جرم قرار دیا گیا ہے۔ہر شخص کومذہبی آزادی اور اظہار خیال کی آزادی کی ضمانت دی گئی ہے۔بیوہ اور مطلقہ خواتین کو گزارے کی گارنٹی دی گئی ہے اور عورتوں بچوں کے حقوق کے تحفظ کی بات کہی گئی ہے۔ قانون کے سامنے سب کو یکساں شہری قراردیا گیا ہے اور خاص بات یہ کہ صدر کی مدت چار سال مقرر کرتے ہوئے طے کردیا گیا ہے کہ کوئی فرد دو مدّت سے زیادہ اس منصب پر نہیں رہ سکتا۔
صدر مرسی نے پیر، 3؍دسمبر کو ایک انٹرویو میں اصرار کے ساتھ کہا ہے کہ انہوں نے عدلیہ پر پابندیاں عارضی ہیں۔ عدالتیں صرف اقتدار سے متعلق معاملات میں مداخلت کی مجاز نہیں ہوں گی، باقی ان کے دائرہ کار میں کوئی رکاوٹ نہیں آئے گی۔ انہوں نے انکشاف کیا ہے کہ خفیہ ذرایع سے ایک ایسی سازش کا پتا چلا تھا جس کے تار غیر ملک سے جڑے تھے اور اس سازش کے تحت عدلیہ کو استعمال کرکے جمہوری پیش قدمی کو روکنا مقصود تھا۔ جس وقت انہوںنے قومی محکمہ خفیہ کے چیف مراد موافی کو ہٹایا تھا اس وقت بھی ایک ایسی ہی سازش کی خبر آئی تھی، اگر اس کی تصدیق نہیں ہوسکی۔ وہ یہ تھی کہ روزہ افطار کے وقت غزہ میں فوجیوں پر دہشت گردانہ حملے کے بعد جب صدر مرسی وہاں جائیں تو ان کو قتل کردیا جائے۔ اس دہشت گرد حملے کے بعد حملہ آور وں نے ویڈیو گرافی کی تھی جس میں کئی فوجی مارے گئے تھے۔ اورپھراسرائیل کی سرحد میں داخل ہوکر اپنی گاڑیوں کو جلا دیا تھا اور خود لاپتا ہوگئے تھے۔ گمان ہے کہ یہ ساری سازشیں اسرائیل کی طرف سے ہورہی ہیں۔ ابھی مصرمیں جمہوریت کی ابتدا ہے۔ دیکھنا یہ ہے کہ کیا صدر مرسی اور ان کی پارٹی مخالفوں کی سازشوں کے باوجود مصر کو صحیح معنوں ایک تعمیری اسلامی جمہوریہ بنانے میں کامیاب ہوں گے یا نہیں جس میں ہر کمزورفرد، چاہے اس کا تعلق اکثریت سے ہو یا اقلیت سے ہو خود کو پوری طرح محفوظ سمجھے۔

مرسی کی مٹھی میں مصر،مقید یا محفوظ؟ سید منصور آغا


مصر سے ایک مرتبہ پھرشورو شر اور مظاہروں کی خبریں آرہی ہیں۔اس کا سرا ایک بیرونی سازش سے جڑا نظرآتا ہے۔ 26؍ نومبر کی ایک رپورٹ کے مطابق، جس کی ابھی تک تردید نہیں ہوئی ہے، 4؍نومبر کو رام ا
للہ میں مصر کے سابق سفارتکار، وزیر خارجہ اور عرب لیگ کے سابق جنرل سیکریٹری عمروموسیٰ اور اسرائیل کی سابق وزیر خارجہ تسپی لیفنی(Tzipi Livni) کے درمیان ایک خفیہ ملاقات ہوئی تھی جس کی تفصیل روزنامہ’’القدس العربی‘‘ کے مدیرعبدالباری العطوان نے ایک برطانوی سیٹلائٹ ٹی وی چینل کو ایک انٹرویو میں بتائی ہے۔ محترمہ لیفنی ان دنوں سیاسی خلا میں بھٹک رہی تھیں اور 3؍ دسمبر کو ہی سیاست میں واپس آنے اور آئندہ چنائو لڑنے کا اعلان کیا ہے۔ اسی طرح جناب مرسی بھی مصر میں اپنی سیاسی جڑ مضبوط کرنے کی جدوجہد کررہے ہیں۔ مسٹر عطوان کے مطابق لیفنی نے مسٹر موسیٰ سے سیدھے سیدھے کہا کہ غزہ پر اسرائیلی حملے کی کامیابی کے لیے وہ صدر محمد مرسی کو داخلی معاملات میں اس قدر مصروف کردیں کہ وہ اسرائیلی کاروائی میں مداخلت نہ کرسکیں۔ چنانچہ واپس آتے ہی عمروموسیٰ نے صدرمرسی اور ان کی پارٹی کے خلاف عوامی حملے تیز کردیے۔ دوسرامورچہ آئین ساز اسمبلی میں کھولاگیا، جس کے وہ ایک رکن تھے۔ انہوں نے ایک ایسی شق پر بحث کی راہ مسددود کردی جو خود ان کی پیش کی ہوئی تھی۔ ساتھ ہی حزب اختلاف کے گروپوں کو اسمبلی کے بائیکاٹ پر اکسایا تاکہ آئین سازی کا عمل بحران کا شکار ہوجائے اور اسمبلی اپنی مقررہ مدت (30نومبر )تک اس کو منظور نہ کرسکے۔ چنانچہ یکے بعد دیگرے متعدد چھوٹے گروپوں نے عمروموسیٰ کے اکسانے پر کونسل کی رکنیت سے خود کوہٹالینے کا اعلان کردیا۔مسڑموسیٰ صدارتی الیکشن میں محمد مرسی کے قریب ترین حریف تھے اور اس تگ و دو میں ہیں کہ کسی طرح اقتدار ان کے زیر اثرآجائے۔
ان کا یہ سیاسی اقدام اس اعتبار سے بڑا سنگین تھا کہ کونسل کی مدت ختم ہونے والی تھی اور آئین سازی کا کام تقریباً سات آٹھ فیصد باقی تھا۔ اگرچہ صدر مرسی نے ایک صدارتی حکم جاری کرکے کونسل کی مدت میںدوماہ کی توسیع کردی، لیکن یہ اشارے مل رہے تھے کہ جس طرح ملک کی اعلیٰ ترین عدالت ’سپریم آئینی بنچ‘ نے، مصر کی پہلی منتخب پارلیمنٹ کے ایوان زیریں کے انتخاب کوصدر مرسی کی حلف برداری سے عین قبل محض تکنیکی بنیاد پرغیر قانونی قرار دے دیا تھا، جس کے بعد فوجی کمان کونسل نے آناً فاناً اس کو تحلیل کرنے کا فرمان جاری کردیا تھا،اسی طرح آئین ساز کونسل اورایوان بالا کو بھی کالعدم کیا جاسکتا ہے۔ یہ بات قابل ذکر ہے اس مقصد کی کئی عرضیاں مذکورہ بنچ میں زیر سماعت ہیں جس کے اکثر جج صاحبان کی تقرری معزول ڈکٹیٹر صدر حسنی مبارک کے دور میں ہوئی تھی۔ ظاہر ہے انہوں نے ایسے ہی افراد کا تقرر کیا ہوگا جن کا رجحان مذہب سے دوری کا ہو۔ یہ بات بھی قابل ذکر ہے کہ صدر مرسی کو اقتدار منتقل کرنے سے پہلے سپریم فوجی کمان کونسل نے، جس کو حسنی مبارک سے اقتدار منتقل ہوا تھا، ایک فرمان جاری کرکے آئین کی توثیق کا اختیارخود اپنے ہاتھ میں لے لیا تھا۔یہ سب تدبیریں اس لیے تھیں کہ اگرچہ لامذہب گروپ اقلیت میں ہے مگر آئین ان کی پسند کا ہی ہو۔ صدر مرسی نے زہرکے یہ دونوں گھونٹ اس وقت تو خاموشی سے پی لیے، مگر12اگست 2012ء کو 77 سالہ وزیر دفاع اور سپریم فوجی کمان کونسل کے چیئرمین فیلڈ مارشل احمد سمیع طنطاوی اور ان کے معتمد خاص چیف آف آرمی اسٹاف جنرل سمیع عنان کو ریٹائر کرکے فوج پر اپنی گرفت مضبوط کرلی۔11فروری 2011ء کو صدر حسنی مبارک کے زوال کے بعد سے طنطاوی ہی فوجی کمان کونسل کے ذریعہ ملک پر حکومت کررہے تھے۔ مگر عدلیہ میں ابھی ان جج صاحبان کا دبدبہ ہے جوسابق نظام کے پسندیدہ تھے۔ سمجھا جاتا ہے ان کی ہمدردیاں مصر کے نئے رجحان اور نومنتخب صدر سے زیادہ مخالف نظریے سے وابستہ ہیں۔
مسٹر موسیٰ کی مہم کے زیراثر چند ارکان کی علیحدگی کے باوجود ایک سو رکنی آئین ساز کونسل کے ممبران کی تعداد ازروئے قانون آئین کی منظوری کے لیے مطلوب دوتہائی یعنی67 سے کم نہیں ہوئی۔ چنانچہ حتمی رائے شماری کے موقع پر 85ارکان موجود تھے، حالانکہ خبریں یہ تھیں کہ تقریباً 30 ممبران خود کو الگ کرچکے ہیں۔ اسرائیل اور عمرو موسٰی کے درمیان اس سازبار کی تصدیق مشرق وسطٰی کے معاملات کے ایک اسرائیلی ماہر بنہار عنبری نے بھی کی ہے۔ انہوں نے روسی ٹی وی چینل ’’رشیا ٹودے‘‘ کو ایک ملاقات کے دوران بتایا کہ مصری صدر مرسی نے اسرائیلی حملے کو شروع ہونے سے پہلے ہی نامراد کردیا۔ انہوںنے اہم بات یہ کہی کہ ’’اسرائیل نے کچھ داخلی طاقتوں پر انحصار کیا تھا کہ وہ مسڑی مرسی کو اندرون ملک سیاسی و اقتصادی معاملات میں الجھائے رکھیں گے‘‘۔ مگر ایسا نہیں ہوسکا اور صدر مرسی کے دبائو میں اسرائیل کو19نومبر کو اپنے حملے روک دینے پر آمادہ ہونا پڑا جس پر امریکا سمیت کئی ممالک نے صدر مرسی کو داد و تحسین سے نوازا۔ مشرق وسطیٰ کی تاریخ میں یہ پہلا موقع ہے جب اسرائیل کو ایسی پسپائی اختیارکرنی پڑی۔ اس سے ضمناً ایک نکتہ یہ صاف ہوتا ہے کہ اہل فلسطین پر اسرائیل ماضی میں مظالم اس لیے جاری رکھ سکا کہ مصر کے سابق حکمرانوں کی اس کو تائید حاصل تھی، ورنہ کوئی وجہ نہیں کہ صدر مرسی اسرائیل کے حملے رکوا سکتے ہیں مگر انور سادات اور حسنی مبارک نہیں رکوا سکے۔اسرائیل اگرچہ حالیہ امریکی صدارتی الیکشن میں صدر اوباما کو وہائٹ ہائوس سے باہر کا راستہ دکھانے میںکامیاب نہیں ہوسکا مگر اس کو یہ امید ضرور ہے وہ صدرمرسی کو منصب چھوڑنے پر مجبور کاسکے گا تاکہ مصر میں کوئی ایسا شخص پھر برسر اقتدار آجائے جو فلسطینیوں اور عربوں کے مفادات کے بجائے اسرائیلی مفادات کا نگراں ہو۔
اس جنگ بندی کے اگلے ہی دن،20نومبر کو صدر مرسی نے ایک غیر معمولی فرمان جاری کرکے (عارضی طور) پر عدلیہ پر یہ پابندی لگادی کہ نہ تو کسی صدارتی فرمان کو کالعدم کیا جائے گا نہ آئین ساز کونسل کو چھیڑا جائے گا۔ جس پر یہ اندیشہ ظاہر کیا گیا وہ بھی سابق صدور کی طرح ملک کے آمر بن جانا چاہتے ہیں۔ چنانچہ احتجاجوں کا سلسلہ شروع ہوگیا، جو ہنوز جاری ہے۔لیکن مرسی نے عدالت عالیہ کے ججوں سے ملاقات کے دوران اور قوم سے ٹی وی پر خطاب میں یہ اطمینان دلایا ہے کہ یہ اقدام عارضی ہے اور اس کامقصد صرف اتنا ہے کہ آئین سازی اورعوام کے منتخب نمائندوں کو اقتدار کی مکمل منتقلی میں کوئی رکاوٹ پیدا نہ ہو۔
ایک اندیشہ یہ بھی تھا کہ اگر اس صدارتی حکم کے باوجود عدالت عالیہ نے آئین ساز کونسل کو کالعدم کردیا یا اس کی مدت میں صدارتی حکم سے کی گئی توسیع کو مسترد کردیا تو ایک نیا بحران کھڑا ہوجائے گا۔ چنانچہ آئین ساز کونسل نے ایک طویل اجلاس کیا جو جمعرات (29نومبر ) کو رات بھر چلتا رہا اور جمعہ 30؍نومبر کو اپنی مدت ختم ہونے سے پہلے آئین کی تمام 234دفعات کو فائنل منظوری دے دی۔ اس پر اپوزیشن کا اعتراض یہ ہے کہ آئین میں ملک کی مشترکہ سوچ کے بجائے صرف ایک ہی غالب رجحان کا عکس ملتا ہے اور کیونکہ اس پر ووٹنگ میں عیسائی اوراجتماعی امور میں مذہب کے عمل دخل کے مخالف ممبران نے حصہ نہیں لیا،اس لیے اس منظوری کا اعتبار ختم ہوگیا۔ انہوں نے یہ دلیل غالباً ہندستان کی بڑی اپوزیشن پارٹی بھاجپا سے لی ہے جو یہ اصرار کرتی ہے کہ ہرسرکاری فیصلہ اس کی رائے اور ترجیح کے مطابق لیا جائے،ورنہ وہ پارلیمنٹ نہیں چلنے دے گی۔
آئین ساز کونسل کی اس مستعدی پر اگرچہ مخالف سیاستداںاورچند صحافی جلد بازی کا الزام عاید کررہے ہیں مگر اس پر قانونی سوال نہیں اٹھایا جاسکتا۔یہ جمہوریت کی جڑیں جمانے کا ایک قدم ہے۔ اس منظوری سے سپریم آئینی عدالت کے محترم جج صاحبان بھی ششدر رہ گئے، جو ہفتہ کے دن آئین ساز کونسل کے قانونی جواز پر زیر غور عذرداریوں پر اپنا فیصلہ صادر کرنے والے تھے۔ اسی دوران صدر مرسی نے سابق دور سے چلے آرہے اٹارنی جنرل عبدالمجید محمود کو ان کے منصب سے ہٹا دیا اور ان کی جگہ طلعت عبداللہ کو حلف دلادیا۔ اگرچہ مسٹر محمود کو وٹیکن میںملک کا سفیر مقرر کیا گیا ہے مگر انہوں نے اپنے ہٹائے جانے پر احتجاج کیا اور نئی ذمہ داری نہیںسنبھالی ہے۔
ہفتہ یکم دسمبر کو سپریم آئینی عدالت کے باہر صدر مرسی کے حامیوں نے مظاہرہ کیا۔ اگرچہ وزارت داخلہ کی طرف سے ججوںکو تحفظ فراہم کرنے کا یقین دلایا گیا تھا مگر انہوں نے ’’ ذہنی اور جسمانی دبائو ‘‘ پر احتجاج کرتے ہوئے عدالت کا بائکاٹ شروع کردیا۔ اس روز( ہفتہ کو) ہی صدر مرسی نے ایک فرمان جاری کرکے آئین پر ریفرنڈم کے لیے 15؍دسمبر کی تاریخ مقرر کردی ہے۔ ریفرنڈم کے لیے ضابطہ کے مطابق عدلیہ کی نگرانی مطلوب ہے، مگر اندیشہ یہ تھا موجودہ حالات میں ججوں نے اس سے انکارکیا تو ایک نیا مسئلہ کھڑا ہوگا۔ مگر پیر3؍دسمبر کی شام ہوتے ہوتے ’’سپریم جوڈیشیل کونسل‘‘ نے ججوں کے ہڑتال پر رہنے کے عزم کے باوجود ریفرنڈم کی نگرانی سے اتفاق کرلیا ہے۔ اس کا مطلب یہ ہے کہ صدارتی فرمان کے مطابق آئین پر 15؍دسمبر کو ریفرنڈم ہوگا۔ ملک میں موجودہ سیاسی رجحان سے اندازہ یہ ہے کہ اگر عالم مایوسی میں اپوزیشن گروپ ریفرنڈم کو ناکام کرنے کے لیے لاقانونیت پر نہیں اترآئے تو آئین کو بھاری اکثریت سے مطلوبہ عوامی منظوری مل جائے گی، جس کے نوے دن کے اندر تحلیل شدہ ایوان کا انتخاب عمل میں آئے گا اور ملک کا انتظامیہ پوری طرح سول کنٹرول میں آجائے گا۔ لیکن یہ سب اسی صورت میںممکن ہوگا جب ہنگاموں کا دور رک جائے۔ درایں اثنا مرسی حامیوں نے بجز ایک دو مظاہروں کے سڑکوں پر اترنے سے گریز کیا ہے تاکہ ٹکرائو کی صورت پیدا نہ ہو اور ملک میںخون خرابہ کا نیا دور شروع نہ ہوجائے۔ اس لیے اس وقت صرف وہی مظاہرے نظر آرہے ہیں جو اپوزیشن کی طرف سے ہورہے ہیں، مگر اس کا مطلب یہ نہیں مرسی کے موقف کی عوامی حمایت مفقود ہوگئی ہے۔
آئین کے مسودے میں اقلیتوں کو مکمل تحفظ فراہم کیا گیا ہے۔ سابق آئین میں مصر کو عرب دنیا کا ایک حصہ کہا گیا تھا، موجودہ میں عرب اور مسلم دینا کا حصہ کہا گیا ہے۔ سابق کی دفعہ 2کے مطابق’’ریاست کا مذہب اسلام اور زبان عربی ہے۔ شریعت کے اصول قانون سازی کی اصل ماخذ ہیں۔ ‘‘ نئے آئین میں اس دفعہ کو جوں کا توںرکھا گیا ہے۔البتہ دفعہ 219میں وضاحت کی گئی ہے کہ شریعت کے اصولوں سے مرادکیا ہے؟ ساتھ ہی کہا گیا ہے کہ سنی اسلام کے چاروں مذاہب سے رہنمائی حاصل کی جائے گی۔ سابق آئین میں مذہبی اقلیتوںکا کوئی ذکر نہیں، جبکہ نئے مسودے میں کہا گیا ہے عیسائی اور یہودی فرقوں کے لیے قانون سازی کا اصول ملک میں ان کی حیثیت اور مذہب کے مطابق ہوگا۔موحد اقلیت کو اپنی عبادت گاہیں بنانے چلانے کا حق اور اپنے مذہبی امورمیں آزادی ہوگی۔ تمام مذاہب کے انبیا اور رسل نیز اہم شخصیات کی توہین کو جرم قرار دیا گیا ہے۔ہر شخص کومذہبی آزادی اور اظہار خیال کی آزادی کی ضمانت دی گئی ہے۔بیوہ اور مطلقہ خواتین کو گزارے کی گارنٹی دی گئی ہے اور عورتوں بچوں کے حقوق کے تحفظ کی بات کہی گئی ہے۔ قانون کے سامنے سب کو یکساں شہری قراردیا گیا ہے اور خاص بات یہ کہ صدر کی مدت چار سال مقرر کرتے ہوئے طے کردیا گیا ہے کہ کوئی فرد دو مدّت سے زیادہ اس منصب پر نہیں رہ سکتا۔
صدر مرسی نے پیر، 3؍دسمبر کو ایک انٹرویو میں اصرار کے ساتھ کہا ہے کہ انہوں نے عدلیہ پر پابندیاں عارضی ہیں۔ عدالتیں صرف اقتدار سے متعلق معاملات میں مداخلت کی مجاز نہیں ہوں گی، باقی ان کے دائرہ کار میں کوئی رکاوٹ نہیں آئے گی۔ انہوں نے انکشاف کیا ہے کہ خفیہ ذرایع سے ایک ایسی سازش کا پتا چلا تھا جس کے تار غیر ملک سے جڑے تھے اور اس سازش کے تحت عدلیہ کو استعمال کرکے جمہوری پیش قدمی کو روکنا مقصود تھا۔ جس وقت انہوںنے قومی محکمہ خفیہ کے چیف مراد موافی کو ہٹایا تھا اس وقت بھی ایک ایسی ہی سازش کی خبر آئی تھی، اگر اس کی تصدیق نہیں ہوسکی۔ وہ یہ تھی کہ روزہ افطار کے وقت غزہ میں فوجیوں پر دہشت گردانہ حملے کے بعد جب صدر مرسی وہاں جائیں تو ان کو قتل کردیا جائے۔ اس دہشت گرد حملے کے بعد حملہ آور وں نے ویڈیو گرافی کی تھی جس میں کئی فوجی مارے گئے تھے۔ اورپھراسرائیل کی سرحد میں داخل ہوکر اپنی گاڑیوں کو جلا دیا تھا اور خود لاپتا ہوگئے تھے۔ گمان ہے کہ یہ ساری سازشیں اسرائیل کی طرف سے ہورہی ہیں۔ ابھی مصرمیں جمہوریت کی ابتدا ہے۔ دیکھنا یہ ہے کہ کیا صدر مرسی اور ان کی پارٹی مخالفوں کی سازشوں کے باوجود مصر کو صحیح معنوں ایک تعمیری اسلامی جمہوریہ بنانے میں کامیاب ہوں گے یا نہیں جس میں ہر کمزورفرد، چاہے اس کا تعلق اکثریت سے ہو یا اقلیت سے ہو خود کو پوری طرح محفوظ سمجھے۔

Egypt and Alexandria in pictures


Egypt and Alexandria in pictures

Egyptian hieroglyphic alphabet

Egyptian Arabic

Egyptian hieroglyphic digits

#egypt #arabic #alphabet #digits  #africa #alexandria



Alexandria Nickname: The Pearl of the Mediterranean. The Mediterranean’s Lady. The Mediterranean’s Bride.

Ancient Egyptian name: (Ra Kedet – رع كدت)













Egypt

 Ismailia

 

Mohammed Ali Mosque 


Edfu Temple

Entrance to the mosque Qalawun



Sultan Barquq Mosque

Egyptian henna

Alexandria – Montazah Palace


Alexandria ( 3) Paradise beach








If you have more pictures of Egypt you may add under the post 🙂

Source and special thanks to:

Egypt

Egypt and Alexandria in pictures


Egypt and Alexandria in pictures

Egyptian hieroglyphic alphabet

Egyptian Arabic

Egyptian hieroglyphic digits

#egypt #arabic #alphabet #digits  #africa #alexandria



Alexandria Nickname: The Pearl of the Mediterranean. The Mediterranean’s Lady. The Mediterranean’s Bride.

Ancient Egyptian name: (Ra Kedet – رع كدت)













Egypt

 Ismailia

 

Mohammed Ali Mosque 


Edfu Temple

Entrance to the mosque Qalawun



Sultan Barquq Mosque

Egyptian henna

Alexandria – Montazah Palace


Alexandria ( 3) Paradise beach








If you have more pictures of Egypt you may add under the post 🙂

Source and special thanks to:

Egypt